1968 -- ابراہیم ایجنسی پرائیویٹ لمیٹڈ

ابراہیم گروپ کے بانی ،شیخ محمد ابراہیم نے 1947 ء میں ہندوستان سے پاکستان ہجرت کی اور فیصل آباد (لائلپور) میں رہائش پذیر ہو ئے اور اپنا آبائی کپڑے کا کاروبار شروع کیا جو آپ کا خاندان ہندوستان میں کر رہا تھا۔ ابراہیم ایجنسیز نے تقسیم ہند کے فوراً بعد کپڑے کی تجارت کا کاروبار اُس دوران کیا کہ جب 1960 ء کی دہائی میں اُن کا سوت کا کاروبار اپنی بلندیوں کو چھو رہا تھا اور گروپ کا سیلز نیٹ ورک پورے ملک کی ٹیکسٹائل انڈسٹری میں پھیل چکا تھا. گروپ ملک کی بڑی ٹیکسٹائل کمپنیوں کا تیار کردہ یارن (دھاگہ) بھی فروخت کرتا تھا۔ اس امر کی ضرورت محسوس کی گئی کہ سیلز نیٹ ورک کو باضابطہ بنایا جائےا ور ایک چھت تلے لایا جائے۔ 27 اگست ، 1968 ء کو شیخ محمد ابراہیم نےاپنے بیٹوں شیخ مختار احمد اور شیخ سردار احمد کے ہمراہ “ابراہیم ایجنسی پرائیویٹ لمیٹڈ” کی بنیاد رکھی جو بعداذان عظیم ترین ٹیکسٹائل بزنس کا پیش خیمہ ثابت ہوا. ایجنسی کا ابتدائی کاروبار سوت کی فروخت تھا جواُس دوران درآمدی تعاملات کو بجا لانے کے فرائض سر انجام دے رہا تھا۔

1980 – ابراہیم ٹیکسٹائل ملز لمیٹڈ

دسمبر 1980 ء میں پہلا ٹیکسٹائل پلانٹ  قائم کیا گیا جس کی  یارن بنانے کی ابتدائی صلاحیت 12,500سپنڈلز تھی   جس میں مارزولی اینڈ ساویو (اٹلی) Marzoli & Savio (Italy)کی ٹیکنالوجی استعمال کی گئی تھی۔ بعد ازاں مِل کا نام ٹیکسٹائل پلانٹ 1 (ٹی پی 1) رکھ دیا گیا۔ اس میں ابتدائی طور پر پولیسٹر وسکوس یارن (Polyester Viscose Yarn)بنایا جاتا تھا۔

1984 – اے اے سپننگ ملز لمیٹڈ

پہلی سپننگ مِل کی کامیابی کے ساتھ ہی مئی1984 ءمیں  40,608سپنڈلز کی صلاحیت رکھنے والی دوسری مِل قائم کی گئی جو کہ (   ھووا جاپان) (Howa, Japan)ٹیکنالوجی کی حامل تھی۔مِل کو بعد میں ٹیکسٹائل پلانٹ 2 (ٹی پی -2)کا نام دیا گیا۔ پولیسٹر وِسکوز اور پولیسٹر کاٹن یارن وہ خاص اور نمایاں پیداوار تھی جو یہ پلانٹ مہیا کر رہا تھا۔

1989 – زینب ٹیکسٹائل ملز لمیٹڈ

سرعتِ رفتار سے ترقی کرتے ہوئے 1989 ء میں تیسری سپننگ مِل جس کی بنیادی پیداواری صلاحیت 39,168سپنڈلز  تھی اوروہ ھووا ، جاپان(Howa, Japan) کی ٹیکنالوجی کے  ساتھ قائم کی گئی۔بعد ازاں اس مِل کا نام ٹیکسٹا ئل پلانٹ 3 (ٹی پی – 3) رکھ دیا گیا۔ اِس کی خاص مصنوعات جو  اِس پلانٹ میں پیدا کی جاتی تھیں وہ پولیسٹر کاٹن(Polyester Cotton) اور چیف ویلیو آف کاٹن یارن (سی وی سی)(Chief Value of Cotton Yarn)(CVC)تھیں۔

1993 – پاور جنریشن 1

انرجی میں خود اِنحصاری حاصل کرنے کے لئےابراہیم گروپ نے جنوری1994ء میں  پہلا انرجی پیدا کرنے والا پلانٹ قائم کیاجس کی انرجی کی پیداواری صلاحیت 31.8  میگا واٹ تھی۔ پلانٹ چھ فرنس آئل پیدا کرنے والے سیٹوں پر مشتمل تھا جن میں سے ہر ایک 5.3 میگا واٹ پیداوری صلاحیت رکھتا تھا یہ پلانٹ نیگاٹا انجنیئرنگ کمپنی جاپان (Nigata Engineering Company, Japan)نے مہیا کیے تھے۔

1996 – پولیسٹر پلانٹ 1

ارتقا کے جذبے کے سا تھ اور سپلائی کے سلسلے میں کوالٹی اور قیمتی کنٹرول کو موجود رکھتے ہوئے گروپ نے فیصلہ کیا  کہ 1996 ء میں  Backward Integration  کا چناؤ کیا جائے اس طرح اس نے پہلا پولیسٹر پلانٹ دو سو ٹن پیداواری صلاحیت کے ساتھ قائم کیا۔ آرٹ مشینری کی کیفیت (جدید ترین طریقوں پر مشتمل)جرمنی کی کمپنی زِمَّر(Zimmer) نے نصب کی ۔

1999 – ابراہیم ٹیکسٹائل ملز لمیٹڈ کی توسیع

مارکیٹ میں یارن کی بڑھتی ہوئی طلب کو  پورا کرنے کیلئے1999 ء میں ٹیکسٹائل پلانٹ 1 کی تعمیلی صلاحیت کو وسیع کر کے 12,500 سپنڈلز سے 58,080 سپنڈلز تک بڑھایا گیا اور یہ توسیع مارزولی اٹلی (Marzoli, Italy)اور ساویواٹلی (Savio, Italy)کی کون وائنڈنگ(Cone Winding) ٹیکنالوجی پر منحصر تھی۔

2001 – ابراہیم فائبرز لمیٹڈ کی مضبوطی اور شہرت

تعمیلی اور اقتصادی باہمی تعاون کے معمولات کو حاصل کرنے کیلئے  ابراہیم ٹیکسٹائل مِلز ، اے اے سپننگ مِلز ، زینب مِلز اور ابراہیم انرجی کو2001 ء میں ایک کمپنی ابراہیم فائبرز لمیٹڈ(آئی ایف ایل) میں ضم کر دیا گیااور اُسی سال اسٹاک ایکسچینج کی لِسٹ پر لایا گیا۔

2002 – پولیسٹر پلانٹ 2

2002 ء میں لوکل پی ایس ایف ڈیمانڈ میں اضافے کی لہر کو عملی صورت دیتے ہوئے کمپنی نے اپنا 400 ٹن پیداواری صلاحیت پر مشتمل مزید دوسرا پولیسٹر پلانٹ قائم کیا ۔ اس ارتقائی عمل کے بعد چھ سو600 ٹن فی یوم کل پیداواری صلاحیت وسیع ہو گئی۔ مشینری لرگی (جی ایم بی ایچ ) جرمنی (Lurgi GMBH, Germany) کی جانب سے نصب کی گئی جو قبل ازیں زِمَّرZimmer کے نام سے پہچانی جاتی تھی۔

2004 – ٹیکسٹائل پلانٹ 2 کی تجدید

مصنوعات کی کوالٹی کی مزید افزائش کیلئے 2004 ء میں ٹیکسٹائل پلانٹ 2 کاFocal BMR   فوکل بی ایم آر   کیا گیا اور مشینری کومارزولی (اٹلی)Marzoli (Italy)کی ٹیکنالوجی اورشلافورسٹ (جرمنی) Schlafhorst (Germany) کی کون وائنڈنگ Cone Windingسے تبدیل کیا گیا تھا۔

2004 – الائیڈ بینک آف پاکستان کی تحصیل

حکمتِ عملی کی گوناگونی کو ملحوظِ خاطر رکھتے ہوئےابراہیم گروپ نے 2004 ء میں الائیڈ بینک آف پاکستان کواپنی تحویل میں لے لیا اور یہ کام اس نے 14.2 بلین کی مساوی رقم خرچ کرتے ہوئے اضافی سرمائے کی حصہ داری 75.35 فیصد کی نمائندگی کے ساتھ کیا۔ بینک کو بعد میں الائیڈ بینک لمیٹڈ کے نام سے موسوم کر دیا گیا۔

2007 - ٹیکسٹائل پلانٹ 3 کی تجدید

2007 ء کے سال میں ٹیکنالوجی کے لحاظ سےعملِ ارتقا کے ساتھ مطابقت کرتے ہوئے ٹیکسٹائل پلانٹ 3 کی درجہ بندی میں ارتفا ع کیا گیا  اور مشینری کو شلافورسٹ (Schlafhorst, Germany)جرمنی سے لنک وائینڈنگ Link Windingکے ساتھ زنسر Zinser ٹیکنالوجی تک درجے میں ترفع دیا گیا۔

2009 – پاور جنریشن 2

کمپنی کی بڑھتی ہوئی پیداواری صلاحیت کی سُرعتِ رفتار کے ساتھ ہم آہنگی قائم رکھتے ہوئے دوسرا پاور جنریشن پلانٹ قائم کیا گیاجو ٹربو میک سوٹزرلینڈ(Turbo Mach, Switzerland) سے 15 میگا واٹ کی گیس ٹربائن کاحامل ہے۔ اس سے کمپنی کی کُل پاور جنریشن کی وسعت 73.3 میگا واٹ تک بڑھ گئی ۔

2013 – پولیسٹر پلانٹ 3

2013 ء میں ابراہیم فائیبرز لمیٹڈ نے تیسرا پولیسٹر پلانٹ قائم کیا جس کی وسعت 600 ٹن یومیہ پر مشتمل ہے پاکستان میں پولیسٹر سٹیپل فائبر (Polyester Staple Fibre, PSF)کے سب سے بڑے مینوفیکچرر کے طور پر  منظرِ عام پر آیا جس کی کارکردگی کی کُل وسعت 1200 ٹن یومیہ ہے۔ یہ مشینری ایئر لیکویڈAir Liquide  کی جانب سے قائم کی گئی جو قبل ازیں لرگی (جی ایم بی ایچ )Lurgi GMBHکے نام سے نامیدہ تھی۔

2013 – پاور جنریشن پلانٹ 1 کی توسیع

انرجی کی بڑھتی ہوئی ضرورت کو پورا کرنے کے اہتمام کیلئےکمپنی نے پانچ نئے فرنس آئل بنانے والے سیٹ نصب کیے جس میں سے ہر ایک کی پیداواری وسعت 5.3 میگا واٹ ہے اور یہ (Niigata Engineering Company, Japan) نیگاٹا انجنیئرنگ کمپنی،جاپان نے مہیا کیےہیں۔ان انجنز نے2003 ء میں26.5 میگا واٹ کی پیداواری وسعت کے ساتھ باقاعدہ طور پر کام کرنا شروع کیا۔

2016 – پولیسٹر پلانٹ 1 کی توسیع

مصنوعات کے معیار اور زرخیزی کو مزید بہتر بنانے کے لیےکمپنی نے 2016 ء میں پولیمر ، سپننگ اور فائبر لائنز کے ڈیجیٹل کنٹرول کو بلند درجے پر منتقل کیا۔ مشینری اور اس سے متعلقہ ٹیکنالوجی کو Technip Zimmer (Germany)اور Autefa Solution (Germany) سے درآمد کیا گیا ۔

2016 – بی ایم آر آف ٹیکسٹائل پلانٹ 2

ٹیکسٹائل پلانٹ 2 سے یارن کی پیداوار کو  بہترین بنانے کیلئے تمام بیک پروسیس مشینری  جو بلو روم مشینز  ، کارڈ مشینز، لیپ فارمرز اور کامبنگ مشینزپر مشتمل ہے، کوجدید ترین  Truetzchler (Germany)اورSchlafhorst (Germany)مشینری سے تبدیل کیا گیا۔

2017 – بی ایم آر آف ٹیکسٹائل پلانٹ1

پریمیم کوالٹی ،مکمل سپننگ اور وائنڈنگ مہیا کرنے کے عہد کو نبھاتے ہوئے ٹیکسٹائل پلانٹ 1 کو جدید ترین مشینریSchlafhorst (Germany) سے تبدیل کیا گیا۔

2017 – کوئلے کے پلانٹ کی تنصیب

مارکیٹ میں قیمتی مسابقت برقرار رکھنے کے لیے کمپنی نے مہنگے فیول پر انحصار کرنا چھوڑ دیا اور پہلا کوئلے سے چلنے والا پلانٹ نصب کیا اس مقصد کے حصول کے لیے 2015 ء میں Coal Fired Power Plantکی تنصیب کیلئے تعمیری کام شروع کیا گیا۔ یہ بوائلر  ایک گھنٹے میں 80 ٹن بھاپ بنانے کی صلاحیت رکھتا ہے اور 20.4 میگا واٹ بجلی بنانے کی صلاحیت رکھتا ہے۔ امید کی جاتی ہے کہ یہ پراجیکٹ 2017 ء کے اختتام پر کام کرنا شروع کر دے گا۔